Posts

رحمت ‏

آشیاں میرا ہے یا ترا ہے؟  تو جہاں ہے اور مکان میرا ہے! دستارِ شوق مرے سر پر، سر ترا ہے یا مرا ہے!  رحمت تری نگاہ ہے اورنگاہ میں رستہ ترا ہے یا مرا ہے؟  تلاش مکمل ہوچکی ہے کہ الف سے الف تلک کی بات خالی الف کی بات نہیں ہے  الف سے پہلے ہونا ہے اور الف کے بعد ہونا ہے  پہلے نفی ہے اور بعد میں محبت ہے رحمت ہے،  ماممتا ہے. محمد کی میم ہے. ان گنت درود سیدی سرکار دو جہان پر - صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہے. میم کا سفر ہے اور میم ایک ہے. اور رسائی میم تلک الف بنا نہیں ہوتی. الف ہونا آسان کہاں؟ لم یلد ولم یولد  محبت نہیں،  عشق کا سودا ہے  راکھ ہوتی قبا نہیں،  روح ہے  انجذاب درد کے تیر ہورہے ہیں  الف نے پکار لیا ہے  میم سے اظہار ہے  روح مشکبار ہے  رات پھول پھول  چمن مہک  مہک زمین سرخ سرخ  دیپ روشن روشن  چاندنی چاند دونوں  ماہتاب کے پیش ہیں  ید بیضائی ہالہ دل.پر یہ فاطمہ کا لعل ہے جن کی پیشانی سرخ سرخ ہے، جن کی بات اظہر من شمس ہے کہ شمس کی تابش میں پروانے جل جاتے ہیں اور قصیدہ شانِ قلندر شروع ہوتا ہے!  رنگِ حسینی برنگ  لعل یمنی ہے اور عقیق دہنی ہے. یہ سراج دہنی ہے  زندگی اک قالب میں،  کہاں. ہاں اک قالب

سیدہ ‏بی ‏بی ‏جانم ‏

اک ہیبت حسن ہے کہ غیبتِ دل ہے  اور جانے کس نگر سے کشش کی ہوا مجھے کھینچ رہی ہے. زمین کو زمان والے نے بُلایا ہے. خاک نشین تو خاک سے وراء ہوگیا ہے  خاکی اس کی خاک میں کھو کے الحی القیوم کا ذکر ہوگیا ہے. دھیان کر کہ دل کے میان میں نگاہ کے تیر ہیں. جبین جھکتی سیّدہ کو سلام پیش کیے جائے. جانِ حزین کہ رو ہے دل میں. منجمد برق تھی میری اور "رو " بن گئی جب سے ان کو دیکھا. دل نے کہا کھیعص!  کھیعص!  کھیعص!  عاصی کو آس رہی ہے اور آس نے آس میں خود کو چھپالیا ہے. یہ شان رو ہے کہ برق نو ہے. سیّدہ بی بی جانم طہارت کی اعلی مثال کہ مثال ثانی نہیں کوئی!  ان جیسا بننے کی کوشش گستاخی ہے. ان کو دیکھنا عین گستاخی ہے. بس نین جھکے رہتے ہیں اور سجدہ ہوجاتا ہے.  سربقدم سیدہ عالیہ ہے  سر خالی مگر وہ عالی  وہ جن کی تربت پر ہے  نور کے دل کی ہے تھالی  تربتِ زہرا نشیمن ہو مرا تربتِ زہرا سدا رہوں میں  قصور نہیں ہے مگر کشور کا مالک کہتا ہے مکسور ھ ہے اور بی بی جانم کے پاس واؤ کا چشمہ ہے. آیتِ تکویر دل میں ہے اور سورہ مریم چمک رہی ہے. میں نے بی بی مریم سے ان سے سایہ پاتے پایا ہے. طہارت مستعار لی گئی ہے اور لی

کھیعص ‏

پھر سے سرگوشی ہوئی ہے اور پھر احساس کے دریچے سے آواز داخل ہوئی ہے. یہ آواز کو سُنارَہا ہے من نگر کی بتیاں عشق میرا. جسم فانی ہے اور روح اعظم ہے. روح اللہ ہے اور جانب جانب چہرہ اللہ کا ہے  فرش پر رہنے والے نے دستک سنادی ہے. شدت میں روکا گیا ہے اور سنگیت کی وادی میں جسم فانی کا گیت روح گانے لگی ہے  وہ گرج جو فانی دنیا نے سنائی تھی،  اسکا گیت روح نے گایا ہے کہ تار سے تار مل گئی  زمانہ زمانہ سے مل گیا  جسم میں افلاک طویل قدامت کا حسن لیے ایسے لامثال لہُ ہستیاں ہیں کہ دل نے کہا  اے فقیرِ چشتی  اے رہبرِ ہستی  اے کافر مستی  اے تیورِ زمنی  اے جانِ لحنی  یہ تھا قفل جس میں کہا گیا کاف اک برق ہے،  وہ برق جس کو طین سے نسبت ہے اور برق جس نے منسوب کیا ہے مٹی کو اور مٹی کو اچک لے یا مٹی اچک لے اس میں خود کو تو مٹی مٹی نہیں رہتی،... جیسے کہف والوں کا کتا سبقت لے گیا بالکل ایسے مٹی سبقت لیجاتی ہے. یہ سابقہ خواب والوں کو ملتا ہے کہ لاحقہ بھی خوب سے ملتا ہے درمیان میں اللہ ہے  جس نے جہان بھر کو مٹی کو مٹی کردیا اور اپنے نشانِ موت کو عزرائیل سے تعبیر کردیا. جبرئیل امین روح الامین  موت کے فرشتے جانشین. میک

ملوہیت ‏سے ‏الوہیت ‏تک

آج جسقدر ملوہیت کا مالک تمھارا حسن ہے گویا تم نیلے آکاش پر رہنے والی اک ایسی انجیلِ تحریر ہو جس کو یوحنا کے مقدس مصحف سے لیا گیا ہے. قندیلِ نُو .. قندیلِ نو برقِ نو ....  اشجار پر پربت کے سائے  پربت پر انوار ہیں چھائے  افلاک منور ہیں  تم کو ملوہیت کی مٹی نصیب ہے  تم الوہیت کے چراغوں سے جل چُکی ہو  گمان کیا ہے؟ خیال کیا ہے؟   کمان کیا ہے؟   تم دور افق پر رہنے والے رانجھے سے پیار کی بات کرتی ہو مگر رانجھا تو نشان والا ہوتا ہے وہ نشان جو تمھارے سینے میں چمک رہا ہے  جل اُٹھا  کیا؟ دل - دل کو جلنا ہی تھا نا  تُمھارے کوچے میں بیٹھی ماہل کو کیسے منایا جائے کہ تم بھی خُدائی راز ہو  راز؟  فاش راز کیا راز ہوتا ہے؟ آج تم کو کس نے پکارا؟ میں نے؟ نہیں،  ھو کا نشان ہے  نَہیں،  یہ تو گمان ہے  نہیں، یہ تو نسیان ہے  نہیں، یہ تو ہیجان ہے  ہاں، ہاں، یہ گمان ہے  ہاں، ہاں، کن فکان ہے  ہاں ہاں، گورستان ہے  ہاں، ہاں بوستان ہے  یہ تتلیاں، یہ پہلیاں ہیں، یہ اداس نگر سے وجدان کی جانب جانے والے راز جن کو تم سہہ چکی ہو مگر کہتی ہو کہ میں نہیں کہتی بلکہ یار کہتا ہے. یہ سب گورکھ دھندہ ہے کہ کائنات کہانی ہے اور کردا